صرف ربیع الاول میں جلوس پر پابندی کا مطالبہ کیوں؟

in Articles, Tahaffuz, February 2011, ا د ا ر یے, مو لا نا شہز ا د قا د ری تر ا بی

صرف ربیع الاول میں جلوس پر پابندی کا مطالبہ کیوں؟

محترم قارئین کرام! ربیع الاول کا بابرکت اور عظیم مہینہ شروع ہوتے ہی ہر طرف سے یہ صدا آتی ہے کہ ’’حکومت پاکستان جلوسوں پر پابندی عائد کرے‘‘ یہ صدا گیارہ ماہ سنائی نہیں دیتی۔ جب ہر دوسرے دن جلوسوں کی بھرمار نظر آتی ہے۔ صرف اور صرف ایک مہینے یہ رٹ لگائی جاتی ہے۔

محترم قارئین کرام! اب آپ کے سامنے ہم پورے سال نکالے جانے والے جلوس کی فہرست پیش کرتے ہیں جسے پڑھ کر آپ خود فیصلہ کریں کہ صرف بارہ ربیع الاول کے دن جلوس کے خلاف سب کی زبان کیوں کھلتی ہے؟

* یکم محرم کو کالعدم سپاہ صحابہ (دیوبندی گروپ) یوم فاروق اعظم رضی اﷲ عنہ کے موقع پر جلوس نکالتی ہے

* سات محرم الحرام کو شیعہ امروہیہ جلوس نکالتے ہیں

* آٹھ، نو، دس محرم الحرام کو شیعہ مرکزی جلوس نکالتے ہیں

* بارہ محرم الحرام کو شیعہ بہّتر (72)تابوت کا جلوس نکالتے ہیں

* بیس صفر المظفر کو شیعہ چہلم کا جلوس نکالتے ہیں

* آٹھ ربیع الاول کو شیعہ چپ تعزیہ جلوس نکالتے ہیں

* گیارہ ربیع الاول کو سنی تحریک میلاد ریلی نکالتی ہے

* بارہ ربیع الاول کو عوام اہلسنت جشن عید میلاد النبیﷺ کے موقع پر جلوس نکالتے ہیں

* بائیس جمادی الثانی یوم صدیق اکبر رضی اﷲ عنہ کے موقع پر کالعدم سپاہ صحابہ (دیوبندی گروپ) جلوس نکالتی ہے

* تیرہ رجب المرجب شیعہ حضرت علی رضی اﷲ عنہ کے یوم ولادت کے موقع پر جلوس نکالتے ہیں

* اکیس رمضان شیعہ یوم شہادت علی رضی اﷲ عنہ کے موقع پر جلوس نکالتے ہیں

* جمعتہ الوداع رمضان المبارک کے دن شیعہ یوم القدس کا جلوس نکالتے ہیں

* اٹھارہ ذی الحجہ کالعدم سپاہ صحابہ (دیوبندی گروپ) شہادت عثمان غنی رضی اﷲ عنہ کے موقع پر جلوس نکالتی ہے

*ہر سال پانچ فروری کو جماعت اسلامی (دیوبندی گروپ) کالعدم سپاہ صحابہ (دیوبندی گروپ)، حزب المجاہدین (دیوبندی گروپ) اور کالعدم جماعۃ الدعوہ (اہلحدیث گروپ) پورے ملک میں جلوس نکالتے ہیں

* مارچ کے مہینے میں جماعت اسلامی (دیوبندی گروپ)، جمعیت علماء اسلام (دیوبندی گروپ) و دیگر مذہبی جماعتیں حکومت کے خلاف مارچ کا اہتمام کرتی ہیں۔

* چودہ اگست کے دن جماعت اسلامی (دیوبندی گروپ)، کالعدم سپاہ صحابہ (دیوبندی گروپ)، جمعیت علماء اسلام (دیوبندی گروپ) اور کالعدم جماعۃ الدعوہ (اہلحدیث گروپ) پورے ملک میں جلوس نکالتے ہیں

* سندھی ٹوپی اور اجرک کے دن کے موقع پورے ملک میں پیپلزپارٹی جلوس نکالتی ہے

* اٹھائیس مئی کو یوم تکبیر کے موقع پر نواز لیگ پورے ملک میں جلوس نکالتی ہے

* مہنگائی کے خلاف سیاسی و مذہبی جماعتیں پورے ملک میں جلوس نکالتی ہیں

* بے نظیر کی برسی کے دن ستائیس دسمبر کو پورے ملک میں جلوس نکالے جاتے ہیں

* امریکہ کے خلاف ہر تین چار ماہ میں جلوس نکالے جاتے ہیں

*تحفظ ناموس رسالت کے نام پر مختلف جلوس نکالے جاتے ہیں

* ظلم اور قتل و غارت گری کے خلاف جلوس نکالے جاتے ہیں

اس کے علاوہ ملک بھر میں مختلف ایام پر وکلاء، سیاسی، مذہبی و سیاسی جماعتیں، ڈاکٹرز وغیرہ آئے روز جلوس نکالتے ہیں جن کاکوئی شمار نہیں۔

محترم قارئین کرام! آپ نے ملاحظہ فرمایا کہ پورا سال ساٹھ سے ستر جلوس مذہبی، سیاسی، سماجی اور احتجاجی جلوس نکلتے ہیں مگر کوئی بھی سیاسی و مذہبی رہنما یہ نہیں کہتا کہ ان جلوسوں کو بند کیا جائے کیونکہ ان جلوسوں میں ان کی پارٹی کے جلوس بھی شامل ہوتے ہیں۔ اگر پابندی کی بات کی جاتی ہے تو صرف جشن عید میلاد النبیﷺ کے جلوس پر پابندی کی بات کی جاتی ہے جس سے یہ واضح ہوتا ہے کہ بدنصیبوں کو جلوس سے تکلیف نہیں ہے صرف جشن عید میلاد النبیﷺ سے تکلیف ہے۔

یاد رہے! جلوس پر اگر پابندی لگ گئی تو سب سے زیادہ نقصان میلاد منانے والوں کونہیں بلکہ دوسرے لوگوں کو ہوگا۔