بنگلہ دیش : مولانا مودودی کی تمام کتابیں ملکی مساجد کی لائبریریوں سے ہٹا دی گئیں

in Articles, Tahaffuz, August 2010, آ ئينہ کيو ں نہ دوں

Modoodi Books and Bangladesh

بنگلہ دیش : مولانا مودودی کی تمام کتابیں ملکی مساجد کی لائبریریوں سے ہٹا دی گئیں

بنگلہ دیش میں اسلامی فاؤنڈیشن کے حکم پر برصغیر پاک و ہند میں جماعت اسلامی کے بانی مولانا ابواعلیٰ مودودی کی تمام کتابیں ملکی مساجد کی لائبریریوں سے ہٹا دی گئی ہیں۔ اسلامی فاؤنڈیشن ایک سرکاری ادارہ ہے جو مذہبی امور پر نظر رکھتا ہے۔ ملک بھر میں مساجد کی تعداد 24ہزار کے لگ بھگ پائی جاتی ہے جن کی لائبریریوں سے کتابیں ہٹائی گئی ہیں۔ حکومت کا کہنا ہے کہ مولانا مودودی کی کتابیں اسلامی تعلیمات کی اصل روح کے منافی اور متنازع ہیں۔ ملک کی دوسری پبلک لائبریریوں کے بارے ابھی علم نہیں ہوسکا۔ جماعت اسلامی کی جانب سے ابھی کسی قسم کا ردعمل سامنے نہیں آیا ہے۔ واضح رہے کہ بنگلہ دیش جماعت اسلامی کے زیادہ تر رہنما اور کئی سو کارکن مختلف الزامات کے تحت قید ہیں اور مقدمات کا سامنا کر رہے ہیں۔

خبر پر تبصرہ

حکومت بنگلہ دیش مبارکباد کی مستحق ہے کیونکہ اس نے اسلامی نظریات کے خلاف لکھی جانے والی مودودی کی کتابوں پرمکمل طور پرپابندی عائد کردی ہے۔ یہ کام حکومت پاکستان کو بھی کرنا چاہئے کیونکہ مودودی کی تفسیر قرآن ،رسائل ومسائل اور خلافت و ملوکیت نامی کتابیں گستاخانہ عبارتوں سے بھری پڑی ہیں اور خلافت و ملوکیت نامی کتاب میں تو صحابہ کرام علیہم الرضوان کی شان میں سنگین قسم کی گستاخیاں موجود ہیں۔ جسے پڑھ کر یوں محسوس ہوتا ہے کہ یہ کتاب کسی مسلمان نے نہیں، بلکہ گستاخ صحابہ نے لکھی ہے اور کتاب لکھنے والا رافضیوں کا ایجنٹ ہے۔